پی ٹی آئی کا برانڈ ہوں،عمران خان

اسلام آباد:و زیر اعظم عمران خان نے ترجمانوں اور وزرا کو ہدایت کی ہے کہ فنانس بل کے حوالے سے اپوزیشن کے جعلی بیانیے کا ڈٹ کر مقابلہ کیا جائے، ریفنڈ اور ربیٹ کے بارے میں عوامی کنفیوژن کو دور کیا جائے،عوام کو آئندہ ماہ مہنگائی میں کمی سے متعلق بھی بتائیں،آپ کا برانڈ وزیراعظم ہے، جو چور ڈاکو نہیں، اپوزیشن اپنے چور، ڈاکو اور کرپٹ رہنماؤں کو تحفظ دیتی ہے،اپوزیشن کو کسی صورت حاوی نہ ہونے دیں، آئینہ دکھائیں۔ ذرائع کے مطابق پیر کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت حکومتی ترجمانوں کا اجلاس ہوا، جس میں حکومتی وزراء، ارکان اسمبلی اور پارٹی کے سینئر رہنماؤں نے شرکت کی، وزیراعظم نے ملک کی معاشی اور اقتصادی صورتحال پر اعتماد میں لیا، جب کہ وزیراعظم اور وزیر خزانہ شوکت ترین نے شرکاء کو فنانس بل پر بریفنگ دی۔اجلاس میں وزیراعظم اور وزیر خزانہ کے درمیان مکالمہ ہوا۔ذرائع کے مطابق ترجمانوں کے اجلاس میں وزیر خزانہ شوکت ترین نے شرکاء کو مہنگائی اور معاشی صورتحال پر بریفنگ دی۔شوکت ترین نے شرکاء کو بتایا کہ نومبر کی نسبت دسمبر میں مہنگائی میں کمی ہوئی ہے، عالمی سطح پر بھی اشیا کی قیمتوں میں کمی ہورہی ہے، آئندہ مہینے مہنگائی مزید کم ہوگی۔اس دوران وزیراعظم نے ترجمانوں کو ہدایت کی وہ معیشت کے اعداد و شمار عوام کے سامنے رکھیں اور بتائیں کہ ہمیں معیشت تباہ حال ملی، جسے ہم نے کافی حد تک بہتر کرلیا ہے۔اجلاس میں وزیراعظم اور وزیر خزانہ شوکت ترین میں مکالمہ بھی ہوا، عمران خان نے کہا کہ آپ کہتے ہیں معیشت بہتر اور اپوزیشن حکومت پر تنقید کرتی ہے۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کو کسی صورت اثر انداز نہ ہونے دیں، عوام کو حقائق بتائیں، عوام کو آئندہ ماہ مہنگائی میں کمی سے متعلق بھی بتائیں۔عمران خان نے کہا کہ ہماری معاشی ٹیم کی کارکردگی تسلی بخش ہے، آپ کا برانڈ وزیراعظم ہے، جو چور ڈاکو نہیں، اپوزیشن اپنے چور، ڈاکو اور کرپٹ رہنماؤں کو تحفظ دیتی ہے۔انہوں نے کہاکہ اپوزیشن کو کسی صورت حاوی نہ ہونے دیں، انہیں آئینہ دکھائیں، آپ کا لیڈر اپوزیشن کے لیڈروں جیسا نہیں۔دوران اجلاس وزیراعظم نے معیشت کی صورتحال پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اسے بہتر قرار دیا۔وزیراعظم نے کہا کہ عوامی سطح پر بتایا جائے کہ ڈاکومنٹڈ اکانومی ملکی مفاد میں ہے، ایگریکلچر گروتھ اور ملکی ایکسپورٹس تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے، پاکستان کے ریزور 25 ارب ڈالرز تک پہنچ چکے ہیں جس پر بات نہیں ہو رہی، اپوزیشن کے جعلی بیانیہ کا ڈٹ کے مقابلہ کیا جائے، ہیلتھ کارڈز، ہوم فنانسنگ، احساس پروگرام کے فلاحی منصوبوں بارے موثر آگاہی مہم چلائی جائے۔فیصل آبادوفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ شریف فیملی کے پاس لندن کی جائیدادوں کے ثبوت نہیں کہ یہ جائیدادیں کیسے خریدیں، ہمارا نواز شریف سے کوئی ذاتی جھگڑا نہیں، وہ پاکستان واپس آئیں اور اپنے خلاف مقدمات کا سامنا کریں، اپوزیشن ایک ہفتے فوج، دوسرے ہفتے عدلیہ کے خلاف ہوتی ہے، یہی ان کی سیاست ہے، فرقہ واریت پر مبنی سیاست پاکستان کے مستقبل کے لئے درست نہیں، اس کی حوصلہ شکنی کرنی چاہئے، مولانا فضل الرحمان کی قیادت اپوزیشن کے لئے بڑی بدنصیبی ہے، الیکشن ہاریں تو مولانا فضل الرحمان کہیں گے کہ دھاندلی ہوئی ہے، اگر وہ جیت جائیں تو الیکشن شفاف ہوئے ہیں، بڑی سیاسی جماعتوں کو اپنے رویوں پر نظرثانی کرنا ہوگی، ان کی ناکامی سے نقصان پاکستان کا ہوگا، اگر کوئی سمجھتا ہے کہ بلیک میل کر کے اپنے کیسوں میں ریلیف حاصل کرلے گا، تو ایسا ہرگز نہیں ہوگا، ہم احتساب کے ایجنڈے پر الیکشن جیتے ہیں، ہمارا ووٹر احتساب پر عمل ہوتا دیکھنا چاہتا ہے، ہم احتساب سے پیچھے نہیں ہٹ سکتے، 2022مقامی حکومتوں کے الیکشن کا سال ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پیر کو یہاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات فرخ حبیب بھی موجود تھے۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان عام آدمی کی زندگی کو آسان بنانے کے لئے کوشاں ہیں، عالمی منڈی میں کموڈیٹی اور انرجی پرائسز کم ہونا شروع ہو گئی ہیں، اس کا براہ راست فائدہ عوام کو پہنچے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان استحکام کی جانب بڑھ رہا ہے، ملک میں مکمل سیاسی اور معاشی استحکام ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف سے مذاکرات مکمل ہو گئے ہیں، ان شااللہ وسط جنوری تک فنانس (ترمیمی) بل بھی منظور ہو جائے گا۔ ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں استحکام آ رہا ہے۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ تیل، گھی اور دالوں کی یہاں پیداوار نہیں ہوتی، ان کی قیمتیں ہم طے نہیں کرتے، ہم صرف ان چیزوں کی قیمتوں کا تعین کر سکتے ہیں جو پاکستان کے اندر پیدا ہوتی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں