پی ایم ڈی سی رجسٹرار کی بحالی کیخلاف حکومتی اپیل پر فیصلہ محفوظ

اسلام آباد ِسپریم کورٹ نے پی ایم ڈی سی رجسٹرار کی بحالی کیخلاف حکومتی اپیل پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔ بدھ کو چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی خصوصی بنچ نے سماعت کی۔ اٹارنی جنرل نے کہاکہ رجسٹرار پی ایم ڈی سی تالے توڑ کر عمارت میں داخل ہوئے۔ چیف جسٹس نے کہاکہ رجسٹرار پی ایم ڈی سی فیصلے تک بلڈنگ میں داخل نہ ہوں، رجسٹرار اگر اپنے دفتر میں ہیں تو پی ایم ڈی سی سے نکل جائیں۔ اٹارنی جنرل نے کہاکہ رجسٹرار پی ایم ڈی سی کی تعیناتی 2019 کے آرڈیننس کے تحت ہوئی۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہاکہ ہائی کورٹ نے پی ایم سی آرڈیننس ہی کالعدم قرار دیدیا۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہاکہ قانون ختم ہوگیا تو اس کے تحت ہونے والی تعیناتی کیسے بحال ہو سکتی؟،توہین عدالت کی درخواست پر ہائی کورٹ اس نوعیت کا حکم نہیں دے سکتی۔ چیف جسٹس نے کہاکہ ہائی کورٹ نے پی ایم سی ملازمین کو بحال کیا پی ایم ڈی سی کے نہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہاکہ پی ایم ڈی سی کو رجسٹرار اور ملازمین کے متعلق فیصلے کا اختیار ہے۔ چیف جسٹس نے کہاکہ ہزاروں ڈاکٹرز کی رجسٹریشن کا عمل رکا ہوا ہے۔ اٹارنی جنرل نے کہاکہ عدالت کسی سابق جج کو پی ایم ڈی سی کا صدر تعینات کرے، قانون کے مطابق ریٹائرڈ جج ہی کونسل کا سربراہ ہو سکتا ہے۔اٹارنی جنرل نے کہاکہ عدالت کی صوابدید ہے جسٹس ریٹائرڈ شاکر اللہ جان کو ہی دوبارہ تعینات کرے یا کسی اور جج کو، کونسل اپنے سربراہ کی تعیناتی ہوتے ہی فعال ہو جائے گی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں