طلباء کی گمشدگی کا معاملہ، ڈیرہ مراد جمالی میں احتجاجی ریلی

ڈیرہ مراد جمالی: آل طلبہ اتحادنصیر آباد کے زیر اہتمام جامع بلوچستان یونیورسٹی کے طلباء کی عدم بازیابی کے خلاف یونیورسٹی کالج آف ڈیرہ مراد جمالی سے ایک احتجاجی ریلی نکالی گئی ریلی میں بی ایس او، پی ایس ایف، بی ایس او پچار، بلوچستان اسٹوڈنٹس پاور، اسلامی جمعیت طلباء سمیت مختلف تنظیمی جماعتوں کے رہنماؤں اور عہدیداران نے شرکت کی ریلی کے شرکاء نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اور بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر اسٹوڈنٹس کی عدم بازبی کے خلاف نعرے درج تھے ریلی یونیورسٹی کالج آف ڈیرہ مراد جمالی سے نکالی گئی جوکہ مین بازار ڈی سی چوک سے ہوتے ہوئے اللہ ھو چوک پریس کلب پر پہنچ کر احتجاجی دھرناومظاہرہ دیا گیا احتجاجی دھرناو مظاہرہ سے بلوچستان اسٹوڈنٹس پاور کے چیئر مین شہباز بھٹی، جمعیت طلباء کے محمد جنید، پی ایس ایف کے آفتاب بنگلزئی، بی ایس او کے احسان بلوچ، بی ایس او پجار تمبو کے میر حسن بلوچ اور نومان جہانگیر سمیت دیگر طلباء تنظیموں کے ممبران و عہدیداران نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جامع بلوچستان کے طلباء فصیح بلوچ اور سہیل بلوچ کو جلد سے جلد بازیاب کیا جائے اور بلوچستان میں طلبہ کو لاپتہ کرنے کا جو سلسلہ ہے اسے ختم کردیا جائے پہلے سے بلوچستان میں تعلیمی نظام نہ ہونے کے برابر ہے اور پھر طلبہ کو تعلیمی اداروں سے لاپتہ کرنا سمجھ سے بالاتر ہے انہوں نے کہا کہ طلباء تعلیمی اداروں میں تعلیم حاصل کر کے ملک کا نام روشن کر رہے ہیں مگر ملک کے مستقبل کے نوجوانوں کو اس طرح لاپتا کرنا افسوس ناک عمل ہے ہم طلباء کھبی بھی اس طرح کے واقعات پر خاموش نہیں ہو سکتے انہوں نے گورنر بلوچستان،وزیر اعلیٰ بلوچستان،چیف سیکرٹری اور آئی جی بلوچستان اور دیگر ریاستی اداروں سے مطالبہ کیا ہے کہ جامع بلوچستان سے لاپتہ ہونے والے افراد کو فوری طور پر منظر عام پر لاکر ان کو رہا کیا جائے تاکہ ان کے ورثاء اور طلبہ تنظیموں میں پائی جانے والی بے چینی اور تشویش کی لہر ختم ہو سکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں