کورونا وائرس نے بنگلہ دیش کے مذہبی امور کے وزیر کی جان لے لی

بنگلہ دیشی کابینہ کے رکن اور مذہبی امور کے وزیر مملکت شیخ محمد عبداللہ کا نئے کورونا وائرس کی وجہ سے لگنے والی بیماری کووڈ انیس کے باعث انتقال ہو گیا ہے۔ ان کی عمر 75 برس تھی۔ ملکی حکومت نے ان کی موت کی تصدیق کر دی ہے۔
اہم بات یہ ہے کہ خود شیخ محمد عبداللہ یا کسی اور کو بظاہر یہ علم نہیں تھا کہ وہ کورونا وائرس کا شکار ہو چکے تھے۔ دنیا بھر میں کئی ملین دیگر مریضوں کی طرح اس وائرس نے اس جنوبی ایشیائی سیاستدان کے بھی پھیپھڑوں اور نظام تنفس کو متاثر کیا تھا۔
شیخ محمد عبداللہ کے ذاتی معاون نجم الحق نے بتایا کہ ان کی طبیعت کل ہفتہ تیرہ جون کی رات کافی خراب ہوئی اور سانس لینے میں بہت مشکل ہونے لگی، تو شیخ محمد عبداللہ کو فوری طور پر دارالحکومت ڈھاکا کے کمبائنڈ ملٹری ہسپتال پہنچا دیا گیا۔ وہاں کچھ ہی دیر بعد ان کا انتقال ہو گیا۔
بنگلہ دیشی وزارت مذہبی امور کے ترجمان انور حسین کے مطابق جب ڈاکٹروں نے عبداللہ کو مردہ قرار دے دیا، تو ان کے خون کا نمونہ لے کر ان کا طبی ٹیسٹ کیا گیا۔ اس ٹیسٹ کے آج اتوار چودہ جون کو حاصل ہونے والے نتائج کے مطابق مذہبی امور کے یہ وزیر کورونا وائرس کا شکار تھے اور ان کی موت بھی اسی وجہ سے ہوئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں