اعلیٰ حکام کے احکامات کے باوجود سوراب میں بھتہ وصولی کا سلسلہ جاری

سوراب: اعلیٰ حکام کی احکامات کے باوجود سوراب میں کسٹم اور ایکسائز کی بھتہ وصولی کا سلسلہ تھم نہ سکا، کوئٹہ سے کراچی غیر ملکی اشیاء اسمگلنگ کرکے بھتے کے عوض سوراب سے باسانی گزرجانے کی کھلی چھوٹ بھی جاری، پیرحیدرشاہ گدر میں ایکسائز کے ناکے پر پرائیویٹ افراد کے زریعے سرعام بھتہ وصولی بند نہ ہوسکی، عوامی حلقوں کا وزیراعلیٰ بلوچستان سے غیرضروری چیک پوسٹوں اور بھتہ وصولی سے متعلق احکامات پر سوراب میں بھی عملدرآمد اور کسٹم و ایکسائز کے ہاتھوں کاروباری افراد کو لوٹنے کی نوٹس لینے کا مطالبہ، رپورٹ کے مطابق سوراب میں کسٹم اور ایکسائز کی جانب سے بھتہ وصول کا دھندہ وزیراعلیٰ کے واضح احکامات کے باوجود تاحال بند نہ ہوسکا، سوراب میں کسٹم ناکے پر ایک منظم طریقہ کار کے تحت بھتے کے عوض غیرملکی اشیاء کی اسمگلنگ کی کھلی اجازت دی جارہی ہے جن کی سے آفیسران کو روزانہ لاکھوں روپے کی مبینہ آمدنی حاصل ہورہی ہے، یہی صورتحال اکیسائز کی ہے،سوراب پنجگور شاہراہ پر پیرحیدر شاہ گدر کے مقام پر چیف سیکریٹری کی احکامات سے لیویز کے ہٹائے گئے چیک پوسٹ پر ایکسائز اہلکار غیراعلانیہ ناکہ قائم کرکے پنجگور سے ایرانی ڈیزل، پٹرول، ٹائلز اور دیگر اشیاء لانے والی گاڑیوں سے سرعام بھتہ وصول کررہے ہیں مذکورہ چیک پوسٹ پر کھڑے اکثر افراد کا محکمہ کے سرکاری اہلکار ہونے کے بجائے سول ہونے کا انکشاف ہوا ہے، جو بھتے کے زریعے بھاری رقم جمع کرکے ایکسائز کے آفیسران کو ادا کرنے پر مامور ہیں، زرائع کے مطابق سوراب میں کسٹم اور ایکسائز کی بھتہ خوری سے عام چھوٹے کاروبار کرنے والے غریب ڈرائیورز بھی محفوظ نہیں جن سے پیر حیدشاہ پر کھڑے افراد ایکسائز کے نام پر زبردستی بھتہ وصولی کرتے ہیں نہ دینے کی صورت میں انہیں گالم گلوچ اور تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے، انہوں سے وزیر اعلیٰ بلوچستان، چیف سیکریٹری اور دیگر اعلیٰ حکام سے اپیل کی ہے کہ سوراب میں کسٹم اور ایکسائز کے جاری بھتہ خوری کا نوٹس لیکر انہیں غیراعلانیہ چیک پوسٹوں سے نجات دلائی جائے

اپنا تبصرہ بھیجیں