پیر کوہ میں ہیضہ نے تشویشناک صورت اختیار کرلی، مزید دوبچے جاں بحق ،متعدد کی حالت غیر

کوہلو (انتخاب نیوز) ضلع ڈیرہ بگٹی کے علاقے پیر کوہ میں رواں ہفتے پھیلنے والے وبائی مرض ہیضے نے سینکڑوں افراد کو لپیٹ میں لے لیا ہے گزشتہ روز دو بچے مزید ڈائریا کی وجہ سے جان سے گئے ہیں 7ماہ کی ماہ نور اور آٹھ سالہ اسد جاں بحق ہوگئے ہیں جس سے ایک ہفتے کے دوران جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 19تک پہنچ گئی ہے جس میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں ڈیرہ بگٹی کے نواحی علاقے پیر کوہ میں ہیضے کی وباءآلودہ اور مضر صحت پانی کی فراہمی سے پھیل گئی ہے جہاں او جی ڈی سی ایل مقامی لوگوں کو پانی فراہم کرتا ہے مگر بارشیں نہ ہونے اور پانی کی ٹینک میں گندجمع ہونے کی وجہ سے لوگوں کی زندگیاں داﺅ پر لگ گئی ۔ ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈیرہ بگٹی اعظم بگٹی کے مطابق اس وقت سب سے بڑا مسئلہ واٹر کی کلورنیشن اور صاف شفاف پانی کی فراہمی ہے تاکہ وباءکو جڑ سے ختم کیا جاسکے جب تک علاقے میں صاف پانی کی فراہمی اور واٹر ٹینکوں میں جراثم کش ادویات کا استعمال نہیں کیا جائے گا بہت مشکل ہے کہ ہم اس وباءپر قابو پاسکیں کیونکہ ہیضے کی جڑ اس وقت آلودہ اور وائرس شدہ پانی ہے محکمہ پبلک ہیلتھ ڈیرہ بگٹی کو ہنگامی بنیادوں پر پانی کی کلورنیشن اور صاف پانی کی فراہمی کےلئے کردار ادا کرنا ہے مریضوں کی تعداد اب بھی دن بدن بڑھتی جارہی ہے اور آئے دن لوگ متاثر ہورہے ہیں جس سے ہمیں خدشہ ہے کہ کہی وباءمزید شدت اختیار نہ کرئے کیونکہ اس وقت بھی ہسپتالوں میں مریضوں کی تعداد گنجائش سے زیادہ ہے ہماری ٹیمیں ہسپتالوں اور مختلف قائم شدہ میڈیکل کیمپوں میں مریضوں کے علاج معالجے کےلئے مصروف عمل ہیںمحکمہ صحت اس وبا ءکو جلد از جلد کنٹرول کرنے کےلئے دن رات کوشاں ہے یہاں صاف وشفاف پانی کی فراہمی اور واٹر ٹینکوں میں جراثم کش ادویات کلورینشن کی ضرورت ہے تاکہ ہیضے کی بیماری کو جڑ سے ختم کیا جاسکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں