وفاقی اداروں نے بلوچستان کے عوام کا جینا دوبھر کر دیا ہے، لگتا ہے ہم پاکستانی نہیں ہیں، ہدایت الرحمان بلوچ

وندر:وفاقی اداروں نے بلوچستان کے عوام کا جینا دوبھر کر رکھا ہے سمندر میں جا تو نیوی کے اہلکاروں کے سوالات کا سامنا شاہراہوں پر کوسٹ گارڈ ایف سی کے اہلکاروں کے سوالات کا سامنا جس سے یوں لگتا ہے کہ ہم پاکستانی نہیں ہیں حکومت بلوچستان اپنے کیے گئے معاہدے پر عملدرآمد کرتے ہوئے سمندر سے ٹرالرز مافیا کا خاتمہ کرے تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز حق دو تحریک بلوچستان کے سربراہ مولانا ہدایت الرحمان بلوچ نے سونمیانی وندر کے ساحلی علاقے ڈام بندر کے دورے کے موقعہ پر ماہی گیروں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے بلوچستان کے عوام اور بلوچستان کے ماہی گیروں کے حقوق کیلئے بتیس دنوں تک گوادر میں حق دو تحریک بلوچستان کیلئے دھرنا دیا آخر حکومت بلوچستان کو ہمارے ساتھ بیٹھ کر مذاکرات کرنے پڑے انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے عوام کو وفاقی اداروں نے اس قدر تنگ کردیا ہے کہ آج وہ ان کے ناروا رویہ ہتھک آمیز سلوک نے شاہراہوں پر آکر احتجاج کرنے پر مجبور کر دیا ہے انہوں نے کہا کہ سمندر میں جاتے ہوئے نیوی کے اہلکاروں کے چھبتے ہوئے سوالات کا سامنا کرنا پڑتا ہے جبکہ شاہراہوں پر سفر کرنے والوں کو کوسٹ گارڈ اور ایف سی کے اہلکاروں کے سوالات نے ہمارا جینا دوبھر کر رکھا ہے وفاقی اداروں کے اب تو اہلیان بلوچستان کو یہ محسوس ہو رہا ہے کہ جیسے ہمارا تعلق پاکستان سے نہیں ہے اور ہم پاکستانی عوام نہیں ہیں ماہی گیروں کو ٹرالرز مافیہ نے نان شبینہ سے محروم کر دیا ہے حکومت بلوچستان نے ہم سے جو مزاکرات کیے تھے ان پر فوری طور پر عملدرآمد کرائے نہیں تو گڈانی ڈام کنڈملیر اورماڑہ پسنی سربندر گوادر پیشکان گنز اور جیونی سمیت تمام کوسٹل ایریاز میں ماہی گیروں کو یکجا کرکے احتجاجی تحریک شروع کریں گے جس کیلئے ماہی گیروں کو گڈانی سے لیکر جیونی تک اپنی صفوں میں اتحاد و یکجہتی پیدا کرنی ہوگی انہوں نے کہا کہ بلوچستان حکومت اپنے کیے گئے معاہدوں پر فوری طور پر عملدرامد کرائیں اس موقعہ پر ڈام کی سیاسی و سماجی شخصیت امیر حمزہ خاصخیلی اور ان کے فرزند بشیر احمد خاصخیلی کی جانب سے اپنے اعزاز میں دیے گئے ٹی پارٹی میں شرکت کی جس میں وڈیرہ عبدالرحمن ادرو واڈہ آدینک بلوچ و دیگر موجود تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں