اکبر آسکانی بلوچستان اسمبلی کے سب سے زیادہ ٹیکس دینے والے رکن قرار

کوئٹہ:صوبائی وزیر فشریز و لائیوسٹاک میر اکبر آسکانی بلوچستان اسمبلی کے سب سے زیادہ ٹیکس دینے والے رکن قرار بی اے پی کے خلیل جارج نے کوئی ٹیکس ادا نہیں کیا، ایف بی آر کی جانب سے پارلیمنٹرینز ٹیکس ڈائریکٹری 2019جاری کردی گئی جس کے مطابق بلوچستان عوامی پارٹی کے رکن و صوبائی وزیر فشریز میر اکبر آسکانی 1کروڑ 33لاکھ 90ہزار 247روپے ٹیکس دیکر سب سے زائد انکم ٹیکس دینے والے رکن ہیں جبکہ ان کے بعد سابق وزیراعلیٰ جام کمال خان نے 1کروڑ 17لاکھ 50ہزار 799روپے ٹیکس ادا کیا، وزیراعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے 10لاکھ 61ہزار 777روپے، اسپیکر بلوچستان اسمبلی میر جان محمد جمالی نے 6لاکھ 40ہزار 909روپے، صوبائی وزراء سردار محمد صالح بھوتانی نے 7لاکھ 86ہزار 411روپے، میر ظہور بلیدی 6لاکھ 54ہزار 611روپے،سردار عبدالرحمن کھیتران نے 12لاکھ 43ہزار 455روپے، نوابزادہ طارق مگسی نے 10لاکھ 99ہزار 982روپے،میر سکندر علی عمرانی نے 21لاکھ 10ہزار 578روپے، زمرک خان اچکزئی نے 8لاکھ 89ہزار 240روپے، عبدالخالق ہزارہ نے 10لاکھ 42ہزار 400روپے، اپوزیشن لیڈر ملک سکندر خان ایڈوکیٹ نے 8لاکھ 78ہزار 886روپے،سابق وزراء اعلیٰ نواب ثناء اللہ زہری نے 5لاکھ 81ہزار 802روپے، نواب اسلم رئیسانی نے 3لاکھ 43ہزار 211روپے، اراکین اسمبلی سردار یار محمد رند 5لاکھ 96ہزار 601، میر نعمت اللہ زہری نے 5لاکھ 68ہزار 647روپے، میر سلیم کھوسہ نے 8لاکھ 26ہزار 678روپے،،میر عارف جان محمد حسنی نے 2لاکھ 69ہزار 800روپے، میر عمر خان جمالی 8لاکھ 95ہزار 192روپے، میر زابد علی ریکی نے 5لاکھ 14ہزار 200روپے،میر حمل کلمتی 28لاکھ 84ہزار 301روپے ٹیکس ادا کیا،ایف بی آر نے 44ارکان کی ٹیکس رپورٹ جاری ہے جبکہ بلوچستان اسمبلی کے 21اراکین نے اپنے ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروائے جسکی وجہ سے انکے نام ڈٖائریکٹری میں شامل نہیں ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں