ایم پی ایز نالیاں بنانے کی بجائے قانو ن سازی کریں تو مسائل حل ہو جائینگے، جسٹس جمال مندوخیل

ڈیرہ اللہ یار:چیف جسٹس بلوچستان ہائی کورٹ جمال خان مندوخیل نے کہا ہے کہ آئین اور قانونسازی کرنا اراکین پالیمان کا کام عدلیہ کا کام آئین اور قانون پر عملدرآمد کروانا ہے اراکین پالیمان سڑکیں نالیاں بنانے کے بجائے قانونسازی کریں تو مسائل حل ہو جائیں گے اس وقت کوئٹہ سمیت بلوچستان بھر میں مسائل کے انبار ہیں مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کی کبھی کوشش ہی نہیں کی گئی ملک کے تمام ادارے تیزی کیساتھ تنزلی کی جانب گامزن ہیں ہمیں اداروں کو مستحکم بنانا ہوگا ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج جعفرآباد کی عدالت کے احاطے میں وکلا ء افسران سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر صوبائی وزیر ٹرانسپورٹ و بین الصوبائی امور میر عمر خان جمالی سابق صوبائی وزیر میر فائق علی خان جمالی کمشنر نصیرآباد ڈویژن عابد سلیم قریشی ڈی آئی جی نصیرآباد شہاب عظیم لہڑی ڈپٹی کمشنر جعفرآباد عبدالرزاق خجک ایس ایس پی جعفرآباد سید علی آصف شاہ سمیت تمام محکموں کے افسران موجود تھے چیف جسٹس نے کہا کہ ہیپاٹائٹس کنٹرول اتھارٹی موجود ہونے کے باجود ہیپاٹائٹس پر قابو نہ پانا ایک المیہ ہے پہلے سات اضلاع ہیپاٹئٹس سے متاثر تھے اب ان کی تعداد بڑھ کر 9ہوگئی ہے دنیا ترقی کی جانب گامزن ہے ہم ہیپاٹائٹس پر قابو نہیں پارہے انکا کہنا تھا کہ عدلیہ کا کام انصاف پر مبنی فیصلے دینا ہے یہاں مسائل بھی عدلیہ کے ذریعے حل کروانے کی اپیل کی جارہی ہے حکومت عوامی مشکلات کو حل کرنے کے لیے ٹھوس اقدامات اٹھائے نصیرآباد ڈویڑن میں پینے کے صاف پانی معیاری تعلیم اور صحت کے شعبوں میں بہتری لانے کی اشد ضرورت ہے انہوں نے مزید کہا کہ مجھے اللہ تعالیٰ کے سوا کسی کا خوف نہیں ہے خوفزدہ رہنے والے انصاف پر مبنی فیصلے نہیں کرسکتے چیف جسٹس نے کہا کہ بھاگ کو پینے کے پانی کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے آئندہ چند ہفتوں میں فزیبلٹی تیار ہو جائے گی جس کے بعد سبی سے بھاگ کو پانی کی فراہمی کو یقینی بنایا جائیگا پانی بنیادی سہولیات میں شامل ہے پانی کے بغیر انسانی زندگی محفوظ نہیں ہوسکتی عوام کو بنیادی سہولیات کی فراہمی کے لیے کسی بھی حد تک جانا ہوگا جائیں گے چیف جسٹس جمال خان مندوخیل کا یہ بھی کہنا تھا کہ بلوچستان میں پانچ ٹریبونلز ہیں جبکہ وکلاء کی تعداد ہزاروں میں ہے اتنے وکلاء کو ٹریبونلز میں تعینات کرنا ممکن نہیں ہے ماتحت عدالتیں مقدمات کو نمٹانے میں تاخیر نہ برتیں سزا جزا دینے کا اختیار عدلیہ کو ہے مگر کسی مجرم کی تذلیل کا اختیار کسی کو نہیں ہونا چاہیے نصیرآباد ڈویژن میں تعلیمی سہولیات کی عدم فراہمی پر چیف جسٹس کا کہنا تھا نصیرآباد ڈویڑن میں ایسے بھی اسکول موجود ہیں جنہیں عمارت نہیں ہے طلبہ و طالبات کھلے آسمان تلے تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ہیں جہاں اسکول کی ضرورت ہے تو وہاں عمارت نہیں دی جاتی جہاں ضرورت نہیں ہوتی وہاں عمارت بنوائی جاتی ہے جس سے عمارتیں وڈیروں کے باڑے بن جاتی ہیں منتخب نمائندوں کو تعلیم پر خصوصی توجہ دینی چاہیے جسٹس محمد ہاشم کاکڑ نے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ نصیرآباد ڈویژن کے عوام کا اپنے حقوق کے لیے سوال اٹھانا بڑی تبدیلی ہے بلوچستان ہماری سرزمین ہے ہمیں اپنے سرزمین کا حقیقی طور پر حق ادا کرنا ہوگا جس دن میں حقیقی طور پر حق ادا نہ کرسکا اسی دن مستعفی ہو جانے کو ترجیح دونگا انصاف کے تقاضے پورے کیے بغیر حقیقی انصاف کی فراہمی ممکن نہیں ہوگی اس سے قبل چیف جسٹس نے شہید رحیم بخش مری پولیس لائن میں شہداء کی یاد گار پر پہنچ کر پھول چڑھائے اور فاتحہ کی پولیس کے چاک و چوبند دستے نے چیف جسٹس کو سلامی دی جبکہ ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر ایڈووکیٹ زبیر احمد لاشاری نے چیف جسٹس جمال خان مندوخیل جنرل سیکریٹری مہتاب حسین شر نے جسٹس محمد ہاشم کاکڑ کو روایتی ٹوپی اور اجرک کے تحائف پیش کیے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں