جتنی گالیاں دینی ہیں دو مگر متحد ہو کر ایک سمت میں چلو،مراد علی شاہ

کراچی،وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ کورونا کے حوالے سے پورے ملک کا بیانیہ ایک ہونا چاہیے، کیا ہم انتظار کر رہے ہیں کہ لاشیں دیکھیں اور پھر متحد ہوں،مجھے جتنی گالیاں دینی ہیں دو مگر متحد ہو کر ایک سمت میں چلو، وفاق نے اپنا پروگرام بنالیا، اس میں سماجی فاصلے کا خیال نہیں ہو رہا، اس طرح کے لاک ڈاؤن کا کیا فائدہ ہوگا؟کورونا وائرس بین الاقوامی وبا ہے، وائرس سے متعلق کوئی بھی غلطی کریگا توپوری دنیا متاثر ہوگی، اس وائرس کو بالکل بھی غیر سنجیدہ نہ لیا جائے،ابھی تک سندھ حکومت ڈھائی لاکھ راشن بیگز تقسیم کرچکی ہے، ہم راشن دیتے ہوئے تصاویر نہیں بناتے۔ پیر کو میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں 30 لوگ صحت یاب ہوکرجاچکے ہیں، روزانہ کی بنیاد پر کورونا وائرس کے ٹیسٹ ہو رہے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ 24گھنٹوں میں ایک موت مزید ہوئی، کورونا سے صوبے میں 31 لوگوں کی اموات ہو چکی ہے، 317 افراد ابھی ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں۔انہوں نے کہاکہ میں فیصلہ کروں گا اور آپ اس پر عمل نہیں کریں گے تو نقصان میرا بھی ہو گا، کورونا وائرس بین الاقوامی وبا ہے، اس وائرس سے متعلق کوئی بھی غلطی کرے گا تو اس سے پوری دنیا متاثر ہوگی، اس وائرس کو بالکل بھی غیر سنجیدہ نہ لیا جائے۔وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا کہ ہم نے لاک ڈاؤن سب سے صلاح مشورہ کرکے بہت سوچ سمجھ کر کیا تھا، جیسے ہی سندھ میں پہلا کیس آیا تو ہم نے حکمت عملی بنائی، یہ کہنا بالکل غلط ہے کہ ہم نے سوچے سمجھے بغیر لاک ڈاؤن کیا۔انہوں نے کہاکہ ہم پر الزام ہے کہ ہم نے لاک ڈاؤن کے معاملے میں زبردستی کی، ہم سے غلطیاں ہوئی ہیں تاہم لاک ڈاؤن بہت ضروری تھا، ہم نے احتیاط کے پیش نظر اسکول بند کیے، شاپنگ مالز، پارکس اور انٹر سٹی بس سروس بند کی، سب کچھ کرنا اہم تھا، ہم نے مرحلہ وار حکمت عملی بنائی اور اس پر عمل درآمد کروایا، لاک ڈاؤن مزید سخت ہونا چاہیے تھا۔انہوں نے کہا کہ میں نے مارچ میں وفاق سے ملاقات کی، سب کو سندھ کی صورتحال سے آگاہ کیا، اْس وقت دنیا میں 1028 افراد کورونا سے متاثر تھے، اب تعداد بہت زیادہ ہے، اس وقت سندھ میں 35 مثبت کیس اور ایک ہلاکت تھی۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ مجھے جتنی گالیاں دینی ہیں دو لیکن متحد ہو کر ایک سمت میں چلو، کورونا وائرس کے لیے پورے ملک کا ایک بیانیے پر متحد ہونا بہت ضروری ہے، کیا ہم لاشیں دیکھنے کے بعد متحد ہوں گے۔مراد علی شاہ نے کہا کہ وزیر اعظم کے ساتھ ویڈیو کانفرنس ہے، میں ہر کانفرنس میں سندھ کی صورتحال سے وزیر اعظم کو آگاہ کرتا ہوں، وزیر اعظم کی ہدایت پر 14 اپریل تک لاک ڈاؤن پڑھانے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔انہوں نے بتایا کہ مارچ میں وزیر اعظم کو خط لکھ کر صوبے کی ضروریات سے متعلق آگاہ کر دیا تھا، ہم نے یہ بھی وفاق کو بتادیا تھا کہ لاک ڈاؤن 100فیصد ایفیکٹو نہیں ہو رہا۔انہوں نے کہاکہ 26فروری کوپہلا کیس آیا اور 27 فروری کوہم نے ٹاسک فورس بنائی، ہمیں لوگوں کی امداد کے لیے ڈیٹا چاہیے تھا، ڈیٹا ملنے میں بہت تاخیر ہوئی، ابھی تک اس پر کام ہو رہا ہے۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ وفاق نے اپنا پروگرام بنالیا لیکن اس میں سماجی فاصلے کا خیال نہیں ہو رہا، اس طرح کے لاک ڈاؤن کا کیا فائدہ ہوگا؟انہوں نے کہاکہ معیشت کو دھچکا لگا ہے لیکن معیشت پھر سنبھل جائے گی، لیکن انسان تو دوبارہ واپس نہیں آ سکتے۔مراد علی شاہ نے بتایا کہ ابھی تک سندھ حکومت ڈھائی لاکھ راشن بیگز تقسیم کرچکی ہے، ہم راشن دیتے ہوئے تصاویر نہیں بناتے۔انہوں نے بتایا کہ ہم فلاحی اداروں کو تین لاکھ راشن بیگ دے چکے ہیں، کراچی: ہم لوگوں کو جمع کر کے راشن نہیں دے رہے، صبح 4 سے 7 بجے تک لوگوں کے گھروں میں راشن پہنچا رہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ متحدہ قومی موومنٹ اور پیپلز پارٹی کے ارکان اسمبلی نے اپنی ساری تنخواہیں کورونا فنڈ میں دی ہیں، ایک ہزار 78 ڈونر ہمارے پاس پرائیوٹ ہیں، 3 کروڑ 88 لاکھ ایکسپو سینٹر کے ہسپتال پر لگے ہیں، آرمی کو ہم نے پیسے دیئے اور آرمی نے سارا خرچہ کیا، ہمارے پاس بینک کی ساری تفصیلات موجود ہیں۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں