بلوچستان کا 850ارب روپے سے زائد کا سرپلس بجٹ کل پیش کیا جائے گا

کوئٹہ(این این آئی)بلوچستان کا مالی سال 2024-25کا 850ارب روپے سے زائد کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا ،بجٹ کے خسارے کے بجائے سرپلس ہونے کاامکان ہے ۔ تفصیلات کے مطابق گورنر بلوچستان شیخ جعفر خان مندوخیل نے بلوچستان اسمبلی کااجلاس آج جمعہ کی سہ پہر چار بجے طلب کرلیا ہے ۔اجلاس میں صوبائی وزیر خزانہ میر شعیب نوشیروانی مالی سال 2024-25کا بجٹ پیش کریں گے ۔ بلوچستان کے آئندہ مالی سال کے بجٹ کا ہجم 850ارب روپے سے زائد ہونے کا امکان ہے ۔صوبے کے بجٹ میں غیر ترقیاتی اخراجات 600ارب اور ترقیاتی اخراجات 180ارب رکھے جانے کا امکان ہے ،بجٹ میں تعلیم، صحت، بلدیات ،تیکنیکی تعلیم سمیت دیگر شعبوں کو ترجیح دیئے جانے ، ملازمین کی تنخواہوں میں گریڈ 16تک 25جبکہ گریڈ 17سے زائد کے لئے 20فیصد اضافہ کیا جانے کا امکان ہے، آئندہ مالی سال کے بجٹ میں صوبے میں بے نظیر اسکالرشپ پروگرام کے تحت سائنس ٹیکنالوجی، انجینئرنگ اور حساب کے شعبوں میں پی ایچ ڈی کرنے والوں کو وظیفہ دینے ، جامعات کی گرانٹ کو اڑھائی ارب سے بڑھا کر 5ارب ،سکولوں سے باہر بچوں کو داخل کرنے کے لئے 2ارب روپے رکھے جائیں گے۔ غیر ترقیاتی بجٹ میں تعلیم کے لئے 25فیصد، صحت کے لئے 10فیصد بجٹ مختص کیا جائے گا ، لوکل کونسل گرانٹ 16ارب سے بڑھا کر 35ارب روپے کی جائیگی ،زمینداروں کے لئے سولر ٹیوب ویلوں کی مد میں سبسڈی کے لئے10ارب روپے مختص کئے جایں گے جبکہ گرین بس منصوبے کی تربت میں توسیع کے لئے پیپلز بس منصوبہ شروع کیا جائے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں