ایکسائز پولیس نصیر آباد تلاشی کے نام پر تذلیل کرتی ہے‘ سماجی خاتون روپڑی

ڈیرہ مراد جمالی:ایکسائز پولیس نصیرآباد کی ز یادتیوں ہراسمنٹ نازیبا حرکات کے خلاف ایک اور خاتون صدر پولیس تھانہ پہنچ گئی ایس ڈی پی او سرکل ڈیرہ مرادجمالی کے سامنے روتے ہوئے بتایاکہ منشیات کی تلاشی کے نام پر سندھ پنجاب سے آنے والے مسافروں کی خواتین کے سینوں حساس جگہوں پر مرد اہلکار چھوتے ہیں گھنٹوں کے گھنٹے تنگ کرتے ہیں یہ بات صدر پولیس تھانہ ڈیرہ مرادجمالی میں ایکسائز پولیس نصیرآباد کے خلاف آنے والی سماجی خاتون میڈم مہتاب نے ایس ڈی پی او کے سامنے روتے ہوئے بتارہی تھی انہوں نے بتایاکہ ایکسائز پولیس نصیرآباد کے اہلکار آئی جی پولیس بلوچستان چیف سیکرٹری بلوچستان کے واضح احکامات کے باوجود لیویز اور پولیس کے علاقوں میں قومی شاہراہ پر کھلے عام ناکے لگا کر غیر قانونی طور پر منشیات کے نام پر سندھ پنجاب بلوچستان کے مقامی مسافروں کی بلا جواز چیکنگ کے نام پر خواتین کے سینوں حساس جگہوں پر مرد اہلکار چھوتے ہیں نازیبا حرکات کرتے ہیں گھنٹوں کے گھنٹے تنگ کرتے ہیں غیر مقامی مسافر بے عزتی برداشت کرتے ہوئے چلے جاتے ہیں مگر ہم سماجی خواتین ایکسائز پولیس کی زیادتیوں پر خاموش نہیں رہیں گے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن آفیسر نصیرآباد سمیت دیگر اہلکاروں کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے اور قومی شاہراہ پر ایکسائز پولیس کی لوٹ مار کو ختم کرکے قومی شاہراہ کو مسافروں کیلئے محفوظ بنایا جاسکے بصورت دیگر سماجی خواتین احتجاج کرنے پر مجبور ہوجائیں گی۔نصیرآباد پولیس درگاہ کٹبار شریف کی فیملی کی بے حرمتی کرنے والے ایکسائز پولیس انسپکٹر قربان علی بھٹی سمیت پانچ اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج ہونے کے باوجودگرفتار نہ کرسکی ہزاروں مریدوں میں غم وغصہ کی لہر 24گھنٹوں کے دوران مقدمہ میں نامزد ملزمان کو گرفتار نہ کیا گیا اور ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن آفیسر نصیرآباد سمیت دیگر اہلکاروں کے خلاف کارروائی عمل میں نہ لائی جائے تو ڈیرہ مراد جمالی ڈیرہ اللہ یار بختیار آباد اور سبی میں قومی شاہراہ بلاک کردی جائے واضح رہے کہ واقعہ کے خلاف مریدوں نے ڈیرہ مرادجمالی میں چھ گھنٹے قومی شاہراہ بلاک کردی تھی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں