میرے بھائی کے قتل میں نامزد ملزموں کو گرفتار کرکے ہمیں تحفظ اور انصاف فراہم کیا جائے، یاور بلوچ

پنجگور (انتخاب نیوز) پنجگور گرمکان کے رہائشی یاور بلوچ نے اپنے دیگر عزیز واقارب کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میرے بھائی شاہنواز ولد محراب کو 17 نومبر 2021 کو رات کے ساڑھے تین بجے کے قریب کچھ مسلح افراد نے گھر میں گھس کر اندھا دھند فائرنگ کر کے اسے شہید کردیا اور گھر کے دیگر افراد کو زدو کوب کیا اور فائرنگ کرتے ہوئے فرار ہوگئے واقعہ کے فورا بعد ہم نے پولیس کو اطلاع دی جس کے بعد پولیس بھی موقع پر پہنچ گئی اور جائے وقوع سے شواہد اکھٹے کیئے اور ہماری مدعیت پر پولیس نے ملزم دوست جان کے والد نصیر احمد جو کہ اس قتل میں برابر کے حصہ دار تھے اس کے اکسانے پر میرے بھائی کو قتل کیا گیاتھا واردات کے دوران ملزمان میں سے ایک ملزم دوست جان ولد نصیر کو شناخت کرلیاگیا تھا اس کے ساتھ مذید دونقاب پوش بھی تھے جنکی فوری شناخت نہیں ہوسکی انہوں نے کہا کہ واقعہ کے بعد پولیس نے ملزم کے والد نصیراحمد کو بھی حراست میں لیکر لاک اپ کردیا تھا مگر وہ بھی رہا ہوگئے انہوں نے کہا کہ ہم غریب اور پرامن شہری ہیں بھائی کے قتل پر ہم نے قانون کا سہارا لیا تھا اور اب بھی قانون اور قانون نافذ کرنے والے اداروں پر ہمارا اعتماد ہے انہوں نے کہا کہ ہم اپنی آواز چیف جسٹس ہائی کورٹ ضلعی انتظامیہ اور پولیس کے زمہ داروں تک پہنچانا چاہتے ہیں کہ وہ اس اندوہناک قتل میں ملوث نامزد ملزمان کو گرفتار کرکے ہمیں انصاف دلائیں انہوں نے کہا کہ قتل کے مرکزی ملزم جو دبئی میں کام کررہا ہے اس واقعہ کے چار دن پہلے وہ دبئی سے پاکستان پنجگور آئے تھے اور شاہنوازکو قتل کرکے پھر وہ دبئی چلاگیا اور ہم نے اس حوالے سے پولیس کو آگاہ کیا تھا کہ دوست جان اور انکے بھائی فیاض کے شناختی کارڈ کو بلاک کیا جائے مگر ہماری درخواست پر پولیس نے کوئی ایکشن نہیں کیا اور وہ بآسانی دبئی چلے گئے اور آج تک ہم انصاف کے منتظر ہیں اور ہمارا خاندان موجودہ صورت حال میں شدید تحفظ کا شکار ہے اور ہمیں نامزد ملزمان سے خطرہ ہے ہم مطالبہ کرتے ہیں نامزد ملزموں کو فوری طور گرفتار کرکے ہمیں تحفظ اور انصاف فراہم کیا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں