ملک میں آئین نہ ہوتا تو فواد چوہدری وزیر نہ ہوتے، حافظ حمد اللہ

کوئٹہ: پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے مرکزی ترجمان و جمعیت علماء اسلام کے رہنماء مولانا حافظ حمداللہ نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ خیبرپختونخوا میں جس وقت جے یوآئی کی حکومت تھی تب فواد چوہدری پیدا بھی نہیں ہوئے تھے، فواد چوہدری کی پیدائش سے قبل مفتی محمود ؒ جیسی جمہوری شخصیت تھے جنہوں نے پاکستان کو 1973 کامتفقہ آئین دیا جس آئین پر مفتی محمود کے دستخط ہے اس آئین کے تحت تم وزیر اور عمران خان وزیراعظم بن کے بیٹھے ہیں آئین بنانے والی پارٹی جمعیت کو انتہاپسند کہنے والے خود انتہا پسند اور شدت پسند ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ جمعیت کی قیادت مولانا فضل الرحمن آئین پارلیمنٹ اور جمہوریت کی جنگ لڑتے لڑتے تین خودکش حملوں کا نشانہ بنے، کیا 2014دھرنے کے دوران پارلیمنٹ پر حملہ،پی ٹی وی پر حملہ،پولیس آفیسر، پرحملہ،سول نافرمانی کا اعلان انتہاپسندی شدت پسندی،دہشت گردی اور ریاست سے بغاوت نہیں ہے؟ خیبر پشتونخوا میں شرمناک اور عبرتناک شکست کو چھپانے کیلئے جمعیت پر تنقید کرنے سے زائل نہیں کرسکتے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں