ترکی میں مہنگائی کا 20سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا

استنبول :مالی بحران سے گھرے برادر ملک ترکی میں مہنگائی کا 20 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا ہے۔ترکی کے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ملک میں دسمبر کے دوران اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں 2020 کے اسی مہینے کے مقابلے میں 36 فیصد اضافہ دیکھا گیا ہے۔اعداد و شمار کے مطابق ترکی میں صرف دسمبر میں مہنگائی کی شرح نومبر کے مقابلے میں 21 فیصد سے زائد رہی۔ترک سرکاری حکام کے مطابق ملک میں مہنگائی کا 20 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا ہے، اس سے قبل اس قدر افراط زر دسمبر 2002 میں دیکھی گئی تھی۔ترکی کو اس وقت اپنی حالیہ تاریخ کے سخت ترین مالی بحران کا سامنا ہے، حالیہ دنوں میں امریکی ڈالر کے مقابلے میں ترک کرنسی لیرا کی قدر میں شدید گراوٹ دیکھی گئی ہے۔2020 کے دوران ترکی کی کرنسی کی قدر میں 45 فیصد سے زائد کمی ہوئی ہے۔بین الاقوامی ماہرین ترکی میں افراط زر کی وجہ شرح سود میں کمی کو قرار دیتے ہیں جب کہ رجب طیب اردوان کا موقف ہے کہ سود کی وجہ سے امیر مزید امیر اور غریب غریب تر ہوتا ہے۔واضح رہے کہ 2002 میں ترکی شدید مالی بحران کا شکار تھا، اسے یورپ کا مرد بیمار کہا جاتا تھا لیکن رجب طیب اردوان کی ولولہ انگیز قیادت نے ترکی کو چند ہی برسوں میں دنیا کی 20 بڑی معیشتوں میں شامل کرا دیا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں